37

ننکانہ صاحب

 پاکستان سکھ گوردوارہ پر بندھک کمیٹی نے کرتار پور راہداری کو بھارتی سکھ یاتریوں کے لئے نہ کھولنے پر مودی سرکار کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا ہے کہ وہ کرتار پور راہداری کی راہ میں روڑے اٹکانے کی روش ختم کر دے،کرتار پور راہداری کا کھلنا سکھ کمیونٹی کے72 سالہ  خوابوں کی تعبیر ہے بھارتی حکومت اس خواب کے پھل کے حصول کے لئے تعاون کرے، پاکستان سکھ گوردوارہ پر بندھک کمیٹی کے جنرل سیکرٹری سردار امیر سنگھ نے کہا ہے کہ پاکستان نے قیام امن اور محبتوں کے فروغ میں  ہمیشہ پہل کی ہے،اس مرتبہ بھی پاکستان نے پہل کرتے ہوئے گوردوارہ دربار صاحب کرتار پور کو کرونا وائرس سے پید ا شدہ صورتحال کے بعد سکھ یاتریوں کے لئے دوبارہ کھول دیا ہے،انہوں نے کہا کہ کرتار پور راہداری کھلنے سے قبل بھارتی سکھ تین کلومیٹر کے فاصلے سے گوردوارہ دربا ر صاحب کو صرف دیکھ سکتے تھے اب وہ یہاں آکر اس مقدس مقام کی یاترا اور اپنی مذہبی رسومات بھی ادا کر سکتے ہیں،سردار امیر سنگھ نے شرومنی پر بندھک کمیٹی بھارت سے بھی اپیل کی کہ وہ بھارتی سکھوں کے لئے کرتار پور راہداری کھولنے کے لئے مودی سرکار پر دباؤڈالے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں