80

خضدار۔کمشنر قلات ڈویژن مدثر وحید ملک نے کہا ہے کہ عالمی وباء کرونا کی دوسری لہر شروع ہو چکی ہے

اس لہر سے بچنے کے لئے ضروری ہے کہ عوام الناس کرونا ایس او پیز پر عمل کریں قلات ڈویژن میں کرونا سے نمٹنے کے لئے حکومتی سطح پر تمام تیاریاں مکمل ہیں ضلع خضدار میں ڈویژن سطح پر کرونا ٹیسٹ کی سہولیات مہیاء کر دی گئی ہیں ہر فرد کی یہ زمہ داری ہے کہ وہ بحیثیت زمہ دار شہری ڈاکٹروں کے بتائے گئے ہدایات پر نہ صرف خود عمل کریں بلکہ ہر فرد کو عمل کروانے کی کوشش کریں ان خیالات کا اظہار انہوں نے سہیل الرحمن ہال خضدار میں کرونا سے متعلق شعور و آگاہی سمینار سے خطاب کرتے ہوئے کیا سمینار سے ڈویژنل ڈائریکٹر محکمہ صحت قلات ڈویژن ڈاکٹر شاہد،میڈیکل سپرنٹنڈنٹ ڈی ایچ کیو ہسپتال خضدار ڈاکٹر سعید احمد بلوچ،ماہر طب ڈاکٹر عمر مینگل نے بھی خطاب کیا اس موقع پر ایڈیشنل کمشنر عمران ابراہیم بنگلزئی،زونل ڈائریکٹر لیویز فورس عبدالغنی عالیزئی ایس ایس پی خضدار محمد طارق خلجی سمیت مختلف محکموں کے ڈویژنل اور ضلعی سربرہان بھی موجود تھے قبل ازیں فوکل پرسن کرونا ڈاکٹر شفیع دانش نے شرکاء کو کرونا کے متعلق آگاہی فراہم کرتے ہوئے کہا کہ ملک میں کرونا کی دوسری لہر شروع ہو گئی ہے اور دوسری لہر کی شدت پہلے سے زیادہ ہے اس لئے یہ ضروری ہے کہ ہم اس کے خطرآت کو بھانپتے ہوئے ڈاکٹر وں اور ڈبلیو ایچ او کے وضح کردہ ہدایات پہر سختی سے عمل کریں،ایک دوسرے سے فاصلہ رکھنے،ماسک کا استعمال،بار بار چالیس سیکنڈ تک ہاتھوں کو دھوئیں اور ببھیڑو الی جگہ سجانے سے اجتناب کریں ہم ایس او پیز پر عمل کر کے ہی اس وباء کی اثرات سے خود کو محفوظ رکھ سکتے ہیں جس کسی کو بھی کرونا کی علامات محسوس ہو تو وہ فوری طور پر اپنی معالج سے رابطہ کریں خود کو قرنطینہ کریں اور دیسی ٹوٹکوں کو استعمال کرنے کے بجائے جدید طریقہ کے مطابق باقاعدہ علاج کا انتخاب کریں سیمینار کے اختتام پر کمشنر قلات ڈویژن مدثر وحید ملک نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ یہ سمینار شعور و آگاہی کے لئے ہیں شعور و آگاہی کے زریعے ہم کرونا کے خطرآت سے اپنے لوگوں کو آگاہ کر سکتے ہیں کرونا کی دوسری لہر ملک میں شروع ہو چکی ہے قلات ڈویژن میں حکومتی سطح پر محکمہ صحت کے انتظام میں کرونا سے نمٹنے کے لئے تمام تیاریاں مکمل کر لی گئی ہے خضدار میں کرونا ٹیسٹ کرنے کے لئے مرکز قائم کیا گیا ہے عوام سے گزارش ہے کہ وہ کرونا سے متعلق ڈاکٹروں کی ہدایات پر عمل کر کے خود کو اور اپنے بچوں کو اس موزی وباء سے بچنے میں کردار ادا کریں

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں